آف شوروالے435پاکستانیوں کیخلاف تحقیقات

  • by Admin
  • دسمبر 26, 2017
  • 0
  • 26  Views
  • 0 Shares

اسلام آباد(بیورورپورٹ)چیئرمین نیب نے پانامہ لیکس میں نام آنے والے 435پاکستانیوں کے خلاف تحقیقات کرنے کا حکم دیا ہے۔ منگل کے روز چیئر مین  نیب کی طرف سے جاری حکم نامے میں کہا گیا ہے پانامہ اوربرٹش ورجن آئی لینڈ میں جن پاکستانیوں نے بھی آف شور کمپنیاں بنا رکھی ہیں ان کیخلاف تحقیقات کے لیے کسی بھی قسم کی سفارش اور دباؤ کو خاطر میں نہ لایاجائے۔

پانامہ لیکس میں 435ایسے پاکستانیوں کانام بھی موجود تھا جن کی آف شور کمپنیاں کام کررہی ہیں ۔ ان تمام کیخلاف امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے سپریم کورٹ میں پٹیشن کی تھی  لیکن کیس صرف نوازشریف اور ان کے بچوں کے خلاف ہی چلا تھا ۔ باقی ناموں کو سپریم کورٹ میں زیر غورہی نہیں لایاگیا تھا۔

آف شور کمپنیاں قائم کرنے والوں میں سابق چیئرمین ایف بی آر عبداللہ یوسف بھی شامل  ہیں ان کی کمپنی گرین ڈیل منیجمنٹ کے نام سے رجسٹرڈ ہے ۔ شاہد عبداللہ اور شایان عبداللہ کی کمپنیاں گرین ووڈ انوسٹر اور شیریں انوسمنٹ ہیں ۔ عثمان یوسف کی کمپنی میل بورگ کا نام بھی فہرست میں شامل ہے امیرعبداللہ نامی شخص کی 6 کمپنیاں بھی لسٹ میں شامل ہیں ۔ تحریک انصاف کے رہنماعلیم خان کی آف شور کمپنی ایچ ای ایکس اے ایم 2004 میں بنائی گئی جو برٹش  ورجن آئی لینڈ میں رجسٹرڈ ہے چیئرمین نیب نے متعلقہ اداروں ایف بی آر، سٹیٹ بینک ، ایس ای سی پی اور ایف آئی اے کو کمپنیوں سے متعلق معلومات جمع کرانے کی ہدایت کر دی ہے۔

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

*
*